Selfie Obseession Railway Line

سیلفی کا جنون

”چلیں اب ایک سیلفی ہوجائے۔۔۔!“شاید ہی کوئی ایسی جگہ ہو جہاں ہمیں یہ جملہ سنائی نہ دیتاہو۔گھر،دفتر،تفریحی مقامات حتی کہ بیچ ٹریفک میں بھی آج کل لفظ ”سیلفی“ کی گونج باآسانی سنی جاسکتی ہے۔ موبائل فون کے ذریعے اپنی تصویر بنانے کا عمل سیلفی کہلاتا ہے،سب سے پہلی سیلفی کس نے لی ہوگی یا اس لفظ کا سب سے پہلے استعمال کس نے کیا ہوگاکچھ یقین سے نہیں کہا جاسکتا۔بہرحال 2013 تک لفظ سیلفی اتنی شہرت اور اہمیت ضرور اختیار کر گیا تھا کہ آکسفورڈ ڈکشنری نے اِس لفظ کو اُس سال کا مشہور ترین لفظ قرار دینے میں ذرا بھی پس و پیش سے کام نہیں لیا۔ہرگزرتے دن کے ساتھ سیلفی لینے کے رجحان میں زبردست اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔ جس میں سب سے کلیدی کردار آئے روز نت نئے متعارف ہونے والے اسمارٹ فونز کا ہے۔اب تو ”سیلفی فون“ بھی عام فروخت کے لیئے دستیاب ہیں جن میں بطور خاص سیلفی لینے کے لیئے ایک نہیں،دو نہیں بلکہ چار چار کیمرے نصب ہوتے ہیں تاکہ آپ کی لی گئی سیلفی زیادہ سے زیادہ شاندار نظر آسکے۔یعنی اگر یہ کہا جائے کہ اب سیلفی خوشگوار یادیں محفوظ کرنے کے بجائے صرف خودنمائی کے لیئے استعمال ہورہی ہیں تو کچھ بے جا نہ ہوگا۔ دنیا بھر میں سیلفی کے ذریعے خودنمائی کا یہ خبط اس خطرناک سطح تک جاپہنچا ہے کہ بعض مواقع پر لوگ منفرد یا انوکھی سیلفی لینے کی کوشش میں اپنی قیمتی جان تک سے بھی ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں۔ جدید طبی اصطلاح میں سیلفی کے اِس جنون کو ”سیلفی سینڈروم“ کے نام سے جانا جاتاہے۔ ایک بین الاقوامی تحقیقاتی مطالعے میں کیئے گئے سروے کے مطابق اکتوبر 2011 سے اکتوبر 2019 تک307 افراد سیلفی لیتے ہوئے موت کے منہ میں چلے گئے جو سالانہ اوسطاً 39 افراد بنتے ہیں۔ سیلفی کے دوران موت کے نمایاں ترین اسباب میں ڈوب جانا یا اونچی جگہ سے گرنا سرفہرست ہے جبکہ قاتل سیلفی کی دوڑ میں مرد خواتین پر واضح عددی برتری رکھتے ہیں، اب تک سیلفی سے ہونے والی ہر دس اموات میں سے سات اموات مردوں کی تھیں اور یہ تناسب 70 فیصد کے قریب بنتا ہے۔ نیز سب سے زیادہ فکر کی بات تو یہ ہے کہ سیلفی لیتے ہوئے زندگی کی بازی ہار دینے والوں میں پچاس فیصد افراد کی عمریں 20 سے 29 سال کے درمیان ہوتی ہیں جبکہ 36 فیصد افراد کی عمر 10 سے 19 سال بتائی گئی ہے۔اس تحقیقی مطالعے میں شریک سائنس دانوں نے تجویز دی ہے کہ دنیا بھر میں بالخصوص خطرناک مقامات پر سیلفی کی ممانعت کے زون ہنگامی بنیادوں پر بنائے جائیں تاکہ اس نوعیت کی ذاتی تصاویر کے سبب واقع ہونے والی اموات کا کچھ سدباب کیا جاسکے۔شاید اسی لیئے بعض ممالک میں سیلفی لینے کے دوران بڑھتی شرح اموات پر اکثر پبلک مقامات اور سیاحتی جگہوں کو ”نو سیلفی زون” بھی قرار دیا جارہاہے، جس میں سمندر کنارے، پہاڑیاں اور بلند عمارتیں شامل ہیں۔فی زمانہ موضوع کی حساسیت کو محسوس کرتے ہوئے قارئین کی دلچسپی و معلومات کے لیئے چند جان لیوا سیلفیوں کا مختصر احوال پیش ِ خدمت ہے۔

ڈوبتے سورج کے ساتھ سیلفی نے زندگی کا چراغ گُل کردیا
نومبر 2018 میں ایک 35 سالہ جرمن نژاد خاتون سری لنکا میں دورانِ سیاحت اپنی ایک دوست کے ہمراہ پہاڑ کی چوٹی پر کھڑے ہوکر ڈوبتے سورج کا نظارہ کر رہی تھی کہ اچانک اُس کے ذہن میں پہاڑ سے ذرا مزید ا آگے جھک کر غروب ہوتے ہوئے سورج کے ساتھ سیلفی لینے کا انوکھا خیال آیا اور اُس نے یہ بات اپنی دوست کو بتاتے ہوئے کہا ”چلو ڈھلتے سورج کے کچھ مزید قریب جاکر سیلفی لیتے ہیں“۔ دوست نے اس خطرناک کام سے خاتون کو باز رہنے کا مشورہ دیا لیکن وہ خاتون اپنی دوست کی بات کو سنا اَن سنا کر جیسے ہی آگے بڑھی وہ اپنا توازن برقرار نہ رکھنے کے باعث پیر پھسلنے سے 4000 فٹ (ایک ہزار 200 میٹر) بلند پہاڑ سے ایک کھائی میں جاگری۔بدقسمتی سے اس کھائی تک پہنچنے کوئی راستہ نہ تھا جس کے باعث سری لنکن آرمی کو طلب کرنا پڑا۔ سری لنکن آرمی اور امدادی کارکنوں نے 6 گھنٹے کی تلاش اور ریسکیو آپریشن کے بعد خاتون کی لاش کو بڑی تگ و دو کے بعد آرمی ہیلی کاپٹر کی مدد سے گہری کھائی سے نکالا۔یہ جان لیوا حادثہ سری لنکا کے معروف سیاحتی مقام ورلڈز اینڈ پر پیش آیا، جو سری لنکا کے وسط میں ”ہورٹن پلینز نیشنل پارک“میں قائم ہے، دنیا بھر کے سیاحوں کیلئے یہ جگہ انتہائی پرکشش سمجھی جاتی ہے۔یہ پہلا واقعہ نہیں ہے جو اس سیاحتی مقام پر ہوا ہو۔اس سے قبل سال 2015 میں ہالینڈ سے تعلق رکھنے والا نیا نویلا شادی شدہ جوڑا اپنے ہنی مون کو منانے کے لیئے اسی مقام پر سیلفی لیتے ہوئے حادثے کا شکار ہو گیا تھا، تاہم خوش قسمتی سے یہ جوڑا پہاڑ کی چوٹی سے گرنے کے بعد ایک درخت کی شاخوں میں پھنس گیا تھاجس کی وجہ سے اس نو بیاہتاجوڑے کوزندہ بچا لیاگیاتھا۔



بالکونی میں بنائی گئی جان لیوا سیلفی
گھر کی بالکونی میں میں کھڑے ہوکر سیلفی لے کر سوشل میڈیا اکاؤنٹس پر پوسٹ کرنے کا رجحان ہمارے معاشرے میں بہت زیادہ ہے۔خاص طور پر بڑے شہروں میں جہاں کی زندگی فلیٹس میں مقید ہوتی ہے۔ گھر کی بالکونی سے سیلفی لے کر بیرونی زندگی کی منظر کشی کرنا اکثر افراد کا من پسند مشغلہ ہے مگر یہ کام کتنا زیادہ خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔ اس کا اندزہ امریکی ریاست فلوریڈا میں پیش ہونے والے ایک تازہ واقعہ سے بخوبی لگایا جاسکتاہے۔اکتوبر 2018 میں پاناما شہر میں ایک 44 سالہ امریکی خاتون سینڈرا مونیولا دا کوسٹا (Sandra Manuela Da Costa) صرف ایک منفرد سیلفی لینے کے شوق میں رہائشی ٹاور کی 27 ویں منزل سے گر کر ہلاک ہو گئی۔سینڈرا دو بچوں کی ماں اور اسکول ٹیچر تھی جو حال ہی میں پرتگال سے اپنی ملازمت کے سلسلہ میں پانامہ شہر میں منتقل ہوئی تھی۔ وہ اپنے اپارٹمنٹ کی بالکونی کی ریلنگ کے ساتھ کھڑے ہوکر سیلفی لیتے ہوئے اپنے پیچھے کے منظر کو تصویر میں شامل کرنے کی کوشش کررہی تھی۔ تاہم وہ توازن برقرار نہ رکھ سکی اور بالکونی سے نیچے آ گری۔ امریکی پولیس کے ذرائع کے مطابق سینڈرا تیز ہوا چلنے کے باعث اپنا توازن کھو بیٹھی۔ نیز لوکسر ٹاور میں رہنے والے عینی شاہدین کے مطابق زمین پر گرتے ہوئے بھی اس خاتون نے سیلفی اسٹک کو اپنے ہاتھوں میں مضبوطی سے تھام رکھا تھا۔ مذکورہ ٹاور کے نزدیک موجود تعمیراتی کام کرنے والے تعمیراتی کمپنی کے ایک مزدورنے اپنے موبائل فون سے سینڈرا کے بالکونی سے گرنے کے منظر کو ریکارڈ کر لیا۔نوجوان مزاحیہ شاعر نوید ظفر کیانی کا زیرِ نظر حادثہ کی مناسبت سے کتنا بر محل شعر ہے کہ
منظر کے انتخاب نے چھت سے گرادیا
سیلفی کے اشتیاق میں بندہ تمام شُد
اس واقعہ کی انٹرنیٹ پر زیر گردش وڈیو میں ایک شخص کو دوسرے سے یہ کہتے ہوئے صاف سنا جا سکتاہے کہ ”یہ خاتون پاگل ہے، یہ جا رہی ہے، اس کو دیکھو، اس کو دیکھو… یہ نیچے گر رہی ہے”۔برطانوی اخبار ڈیلی مِرر نے اپنی ویب سائٹ پر واقعے کی وڈیو پوسٹ کی ہے۔جسے درج ذیل مختصر لنک سے آپ بھی ملاحظہ فرماسکتے ہیں۔ http://bit.ly/2Akgigb

جنگلی ریچھ کے ساتھ سیلفی لینے کا انجام
مئی 2018 میں بھارتی ریاست اڑیسہ میں سیلفی کے ایک شوقین کو ناگہانی حادثے کاسامنا اس وقت کرنا پڑا جب ایک ریچھ نے جس کے ساتھ وہ اپنی سیلفی بنانے کیلئے اسکے قریب پہنچ گیا تھا کہ اچانک جنگلی ریچھ نے اس پر حملہ کرکے ہلاک کردیا۔ 27سالہ پربھو بھٹارا جو کہ پیشہ کے اعتبار سے ایک ڈرائیور تھا اور شادی کے مہمانوں کو اپنے ٹرک میں لے کر اُڑیسہ شہر کے ایک مضافاتی گاؤں میں جارہا تھا کہ سڑک کنارے ایک ریچھ کو دیکھ کر اس نے اس کے ساتھ سیلفی لینے کا پروگرام بنایا اور گاڑی روک کراس نے مہمانوں کو گاڑی میں ہی چھوڑا اور خود جنگلی ریچھ کے پاس جا پہنچا لیکن اس سے پہلے کہ سیلفی کے لیئے پوز بناتاریچھ نے اس پر حملہ کردیا اور اسے بھنبھوڑ کر شدید زخمی کردیا جس سے پربھو موقع پر ہی ہلاک ہوگیا۔ عینی شاہدین کے مطابق ریچھ وہاں ایک جوہڑ پر پانی پینے میں مصروف تھااور پربھو دبے قدموں ریچھ کے بالکل عقب میں پہنچ کر سیلفی لینے ہی والا تھا کہ اچانک اُس کاپاؤں پھسل گیا اور توازن برقرار نہ رکھنے کی وجہ سے ریچھ کے چنگل میں جا پھنسا۔ ایک شخص نے پربھو کو بچانے کی کوشش بھی کی جو کامیاب نہ ہوسکی جبکہ وہاں موجود افراد نے پتھر اور ڈنڈے مار کر ریچھ کو بھگانا بھی چاہا لیکن اس وقت تک بہت دیر ہوچکی تھی۔جائے حادثہ کی تصویر چند مقامی لوگوں نے اتاری اور اس واقعہ کی وڈیو بھی بنائی۔ وڈیو میں صاف نظر آتا ہے کہ حادثہ کاآغاز ریچھ کی برہمی سے ہوا۔ جس نے اپنے ساتھ سیلفی بنانے والے شخص پر اپنے تیز ناخنوں سے اسے بری طرح زخمی کیا اور پھر اسے بھنبھوڑ کر رکھ دیا جبکہ اس کے ہتھے چڑھنے والا پربھو جان بچانے کی بھرپور جدوجہد کرتا نظرآتا ہے۔ وڈیو میں مقامی لوگوں کے چیخنے چلانے کی آواز صاف سنائی دیتی ہے۔اس حاثہ کی انٹرنیٹ پر زیرِ گردش ویڈیو کا مختصر لنک درج ذیل ہے۔http://bit.ly/2EUbceH ۔بدقسمتی کی بات یہ ہے کہ اسی علاقہ میں دسمبر 2017 میں بھی تین مختلف واقعات میں دو افراد ہاتھیوں کے ساتھ سیلفی بنانے کی کوشش میں اپنی جان گنوا چکے ہیں۔

چلتی ٹرین کے سامنے سیلفی کا بخار
تھائی لینڈ کے شہر بنکاک میں واقع ”سیمسین ریلوے اسٹیشن“ پر ایک24 سالہ خاتون اپنے دوست کے ہمراہ ریل کی پٹری پر آنے والی ریل کے ساتھ سیلفی لیتے ہوئے ہلاک ہوگئی۔ اس اندوہ ناک واقعہ میں خاتون کے بچ جانے والے دوست کا حادثہ کی تمام تر تفصیل بتاتے ہوئے کہنا تھا کہ ”میں اور میری دوست ریلوے ٹریک کے سامنے بیٹھے مشروب پی رہے تھے کہ اچانک ہمیں دور سے ریلوے پٹری پر ایک ریل گاڑی آتی دکھائی دی۔میری دوست نے مجھے کہا کہ کیوں نا! اس آنے والی ٹرین کے ساتھ ایک سیلفی ہوجائے،ہماری یہ سیلفی سوشل میڈیاپر دھوم مچا سکتی ہے۔مجھے بھی اپنی دوست کی اس بات سے اتفاق تھا سو ہم دونوں ریلوے پٹری کے عین بیچوں بیچ کھڑے ہوکر ریل گاڑی کے اپنے قریب آنے کا انتظار کرنے لگے، جیسی ہی ریل گاڑی ہمارے قریب آئی ہم نے سیلفی اُتار کرجلدی سے ریلوے پٹری سے دور ہوجانے کی کوشش کی لیکن شاید ٹرین ہماری توقع سے زیادہ تیز رفتار تھی اور ہماری ریل گاڑی سے ٹکر ہوگئی“۔فروری 2018 کی صبح پیش آنے والے اس حادثہ میں بدقسمت خاتون موقع پر ہی ہلاک ہوگئی تھی جبکہ اُس کا دوست ریل گاڑی کی ٹکر سے شدید زخمی ہوگیا تھاجسے بعدازاں جائے حادثہ پر موجود لوگوں کی کوشش سے بروقت ہسپتال پہنچا دیا گیا جہاں اُسے ملنے والی طبی امداد نے موت کے منہ میں جانے سے بچا لیا۔حیران کن بات یہ ہے کہ لوگوں میں چلتی ٹرین کے عین سامنے آکر سیلفی بنانے کا رجحان تیزی سے بڑھتا جارہا ہے۔خاص طور پڑوسی ملک بھارت میں اس طرح کے واقعات کے نتیجہ میں ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد دنیا میں سب سے زیادہ ہے۔گزشتہ سال جنوری 2017 میں بھی بھارتی شہر کلکتہ کے علاقے ہاوڑا میں چلتی ٹرین میں لڑکوں کا گروپ سیلفی اسٹک کے ذریعے سیلفی بنا رہا تھا، اسی دوران ایک لڑکا ٹرین سے باہر گرگیا، جس پر دوست کو بچانے کیلئے اس کے تین ساتھیوں نے بھی نیچے چھلانگ لگادی، مگر ان میں سے دو لڑکے ٹرین کے پہیوں کے نیچے آکر ہلاک ہوگئے۔اس واقعہ کے عینی شاہدین کے مطابق سارا مسئلہ سیلفی بنانے سے شروع ہوا، بچے تصویر بنانے میں اتنا مگن تھے کہ انہیں ٹرین کے ہلنے کا احساس ہی نہ ہوا، اور جھٹکا لگنے سے جب ایک دوست باہر گرا تو دیگر بھی اسے بچانے کیلئے گود پڑے اور ٹرین کے نیچے آکر ہلاک ہوگئے۔

اُڑتے جہاز کے ساتھ سیلفی کا جنون
میکسیکو سٹی کی ریاست چیہواہوا کے ایک قصبہ چینیپاس میں رہنے والی دو نوجوان لڑکیاں جن کی عمریں بالترتیب 17 اور 18 برس کے لگ بھگ تھیں، رن وے سے بلند ہوتے ایک چھوٹے طیارے کے ساتھ سیلفی لینے کی کوشش میں طیارے کے پر کی زد میں آکر جاں بحق ہوگئیں۔ذرائع ابلاغ کے مطابق یہ دونوں لڑکیاں رن وے کے قریب منعقد ہونے والی گھوڑوں کی ریس کی تقریب میں شرکت کے لیے آئی تھیں اور تقریب کے اختتام پر گھر واپسی کے لیئے اپنی فلائیٹ کا انتظار کر رہی تھیں کہ کسی طرح یہ دونوں ائیرپورٹ سیکورٹی اہلکاروں سے نظر بچا کر رن وے پر جاپہنچیں۔رن وے سے ایک اُڑنے والے جہاز کے بالکل قریب سے سیلفی لینے کی خواہش میں یہ رن وے پر کھڑے ایک ٹرک پر چڑھ گئیں تاکہ بلند ہوتے جہاز کے ساتھ بالکل قریب سے ایک یادگار اور منفرد سیلفی اُتار کر اپنی دوستوں کو حیران کر سکیں۔مگر اُن کا یہ ”سیلفی ایڈونچر“ جان لیوا ثابت ہوا اور طیارے کا پر ان دونوں لڑکیوں کے سروں ٹکرا گیا جس کے باعث دونوں بچیاں موقع پر ہی دم توڑ گئیں جبکہ لڑکیوں کے ساتھ پر ٹکرانے کے باعث طیارے کو بھی زبردست نقصان پہنچا اور طیارے میں سوار کئی مسافر زخمی بھی ہوئے۔تاہم ائیرپورٹ حکام کی جانب سے طیارے کے حادثے میں زخمی ہونے والے مسافروں کی اصل تعداد میڈیا کو فراہم نہیں کی گئی۔

کیا جان لیوا سیلفی سے بچنا ممکن ہے؟
سیلفی سینڈروم کے مرض پر تحقیق کرنے والے کئی نامور محققین اس سوال کا جواب اثبات میں دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ ”ہمیں اُمید ہے کہ اگر لوگ ہمارا ساتھ دیں اور سیلفی لیتے ہوئے غیر ضروری ایڈونچر ازم سے پرہیز کریں تو اس مسئلہ سے بخوبی نمٹا جا سکتاہے“۔اس ضمن میں محققین کی ٹیم نے”سیفٹی کیمرا“ کے نام سے ایک ایسی منفرد موبائل اپلی کیشن بھی تیار کی ہے جو سیلفی لینے والے افراد کو خطرے سے متنبہ کرتی ہے۔ یہ موبائل ایپ اونچے مقامات،ٹرین کی پٹری یا ایسی کسی بھی خطرناک صورتحال جس سے سیلفی لینے والے کی جان کو ممکنا خطرہ ہو سکتاہے۔ دورانِ سیلفی ہی سرخ لفظوں میں لکھا ایک پیغام سیلفی لینے والے کی موبائل اسکرین پر ظاہر کردیتی ہے کہ ”یہاں سیلفی لینا جان لیوا ثابت ہوسکتاہے“۔ جبکہ محفوظ مقام پر سیلفی لیتے ہوئے موبائل اسکرین پر سبز لفظوں میں یہ پیغام نمودار ہوجاتاہے کہ ”یہاں سیلفی لی جاسکتی ہے“۔ چونکہ یہ ایپ حال ہی میں تخلیق کی گئی ہے اس لیئے اس کے سو فیصد درستگی کے حوالے سے تو فی الحال کچھ نہیں کہا جاسکتا لیکن اس ایپ کو بنانے والی ٹیم کا یہ دعوی ضرور ہے کہ ان کی ٹیم نے تین ہزار سیلفیوں پر اس ایپ کو تجربہ کیا ہے اور خطرناک تصاویر کے بارے میں اس ایپ نے 70 فیصد مواقع پر بالکل درست نشاندہی کی ہے۔دعوی کی سچائی جاننے اور اُس کی تصدیق و تردید کے لیئے آپ اپنی رائے بھی اس ایپ میں درج کرسکتے ہیں،جو مستقبل میں اس ایپ کو مزید بہتر بنانے میں معاون ہوسکتی ہے۔ایپلی کیشن کو درج ذیل مختصر لنک سے ڈاؤن لوڈ کرکے اپنا اسمارٹ فون کا ناگزیر حصہ بنایا جاسکتاہے۔ http://bit.ly/2rUfv0X
حوالہ: یہ مضمون سب سے پہلے روزنامہ ایکسپریس کے سنڈے میگزین میں 01 دسمبر 2019 کی اشاعت میں شائع ہوا

راؤ محمد شاہد اقبال

سیلفی کا جنون” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں