Lockdown Dream Has Crack

عالمگیر لاک ڈاؤن کا خواب ٹوٹ گیا؟

کیا کورونا وائرس کا دنیا سے خاتمہ ہوگیاہے؟یقینا ابھی تک اِس سوال کا جواب ایک بہت بڑی نفی میں ہی دیا جاسکتا ہے لیکن اِس کے باوجود دنیا کے کم وبیش سب ہی ممالک آہستہ آہستہ لاک ڈاؤن کو ختم کرتے جاررہے ہیں۔ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیئے نافذ کیا جانے والا عالمگیر لاک ڈاؤن عالمی ادارہ صحت کے حکم پر عمل میں آیا تھا اور اِس وقت بھی عالمی ادارہ صحت بالکل نہیں چاہتا کہ دنیا کے کسی بھی ملک میں سے لاک ڈاؤن کا خاتمہ ہو۔ مگر شاید دنیا کی معاشی صورت حال اِس حد تک ناگفتہ ہو چکی ہے کہ کوئی بھی سربراہِ مملکت عالمی ادارہ صحت کی لاک ڈاؤن ختم نہ کرنے کی اپیل پر کان دھرنے کو تیار نہیں ہے۔ حالانکہ کورونا وائرس بدستور دنیا کے ہرملک میں نہ صرف موجود ہے بلکہ آنے والے ایام میں پہلے سے بھی ہلاکت خیزہونے کی بھرپور صلاحیت بھی رکھتاہے۔ یہ وہ حقیقت ہے کہ جسے بار بار عالمی ادارہ صحت کی طرف سے لاک ڈاؤن جاری رکھنے کے حق میں بطورِ دلیل بیان کیا جارہاہے۔ یاد رہے کہ کورونا وائرس انسانی جان کے لیئے کتنا بڑا خطرہ ہے،گزشتہ دو ماہ میں یہ دنیا کی ہر حکومت اچھی طرح سے جان چکی ہے۔اگر پھر بھی دنیا کا کوئی ملک مزید لاک ڈاؤن جاری رکھنے پر تیار نہیں ہے تو اُس کی صرف دو ہی بنیادی وجوہات ہوسکتی ہیں کہ یا تو اَب تک کورونا وائرس کے خلاف لاک ڈاؤن اُتنا موثر ثابت نہیں ہوسکا ہے جتنا کہ اِس کے متعلق بلند و بانگ دعوے کیئے جارہے تھے؟یا پھر دوسری وجہ یہ بھی ہوسکتی ہے کہ کورونا وائرس سے زیادہ نقصان کا باعث خود لاک ڈاؤن ثابت ہو رہا ہے۔ جبکہ یہ بھی ممکن ہے کہ یہ دونوں وجوہات مل کر ہی ایک ایسی بڑی وجہ بن گئی ہے کہ جس کے باعث آخر کار دنیا کے ہر ملک کو اپنے ملک میں لاک ڈاؤن مزیدجاری رکھنے سے انکار کرنا پڑا۔

ابتدا میں جب عالمی ادارہ صحت کی جانب سے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیئے دنیا بھر میں لاک ڈاؤن کی ایڈوائزری جاری کی گئی تھی۔ اُس وقت بھی کئی سنجیدہ حلقوں کی طر ف سے یہ سوال اُٹھا دیا گیا تھا کہ کیا واقعی لاک ڈاؤن کورونا وائرس کے خلاف ایک موثر ہتھیار ثابت ہوسکتاہے؟۔ بلاشبہ اکثریتی رائے تو عالمی ادارہ صحت کے موقف کی تائید ہی کرتی دکھائی دی اور اِسی وجہ سے ایک تہائی دنیا میں چند گھنٹوں کے نوٹس پر لاک ڈاؤن کا عملی نفاذ ممکن بھی ہوگیا۔ مگر ایک اقلیتی حلقہ ایسا بھی تھا جو بدستور بضد رہاکہ لاک ڈاؤن کورونا وائرس کے خلاف کارگر اور مفید ثابت نہیں ہوسکتا۔بہرحال یہ رائے جیسی بھی تھی اِسے قبولیت عام نہ حاصل ہوسکی اور اِس رائے کی حمایت میں بولنے والوں کی دنیا بھر میں خوب بھد اُڑائی گئی۔ لیکن دنیا کے چند ممالک جیسے سوئیڈن اور بیلاروس، ایسے بھی تھے جن کی حکومتوں نے عالمی ادارہ صحت کی ایڈوائزری پر عمل پیرا ہونے کے بجائے موخر الذکر اقلیتی تجویز پر عمل کرتے ہوئے اپنے اپنے ملک میں لاک ڈاؤن نافذ کرنے سے مکمل طور پر انکار کردیا۔ ایسا نہیں تھا کہ اِن دونوں ممالک میں کورونا وائرس نے حملہ نہیں کیا تھا۔بس فرق اتنا تھا کہ اِن ممالک کی حکومتوں نے لاک ڈاؤن سے اپنی معیشت کا پہیہ جام کرنے کے بجائے کورونا وائرس کے خلاف دیگر دستیاب طریقہ کار اور وسائل سے جنگ کرنا زیادہ مناسب سمجھا۔ صرف اِن دو ممالک کی وجہ سے کورونا وائرس اِس کریڈٹ سے محروم رہا کہ اُس نے اپنے خوف میں مبتلا کرکے پوری دنیا کو لاک ڈاؤن ہونے پر مجبور کردیا۔

دلچسپ بات تو یہ ہے کہ یہ دونوں ممالک لاک ڈاؤن نہ کرنے کے باوجود بھی کورونا وائرس سے کافی حد تک محفوظ و مامون رہے۔ خاص طور پر جس طرح سوئیڈن اور بیلاروس کے پڑوسی ممالک پر کورونا وائرس نے لاک ڈاؤن ہونے کے باوجود بھی جو آفت ڈھائی۔ اُس کا عشر عشیر جانی نقصان بھی کورونا وائرس اِن ممالک میں نہیں پہنچاسکا۔ جس کے بعد لاک ڈاؤن کرنے والے ممالک بھی پوری سنجیدگی کے ساتھ یہ سوچنے پر مجبور ہوئے کہ آخر کار سخت ترین لاک ڈاؤن کرکے بھی وہ اُن ہزاروں اُموات سے اپنے معصوم شہریوں کیوں نہ بچا سکے،جن سے سوئیڈن اور بیلاروس جیسے ممالک باآسانی بچ نکلے ہیں۔ لطیفہ تو یہ ہے کہ جن ممالک نے جتنا زیادہ سخت لاک ڈاؤن نافذ کرنے کی کوشش کی، اُتنی زیادہ ہی وہاں کورونا وائرس کے باعث اُموات واقع ہوئیں جبکہ وہ ممالک جنہوں نے لاک ڈاؤن نہیں کیا یا پھر نام کا لاک ڈاؤن نافذ کیا وہاں کورونا وائرس کے موذی مرض کووڈ 19 سے ہلاک ہونے والے افراد کی شرح اموات ناقابلِ یقین حد تک کم رہی۔ اِن اعدادو شمار نے کورونا وائرس کے خلاف لاک ڈاؤن کی افادیت کی قلعی کھول کر رکھ دی اور نوبت یہاں تک آپہنچی کہ تنگ آمد،بجنگ آمد کے مصداق امریکہ،جرمنی،فرانس و دیگر ممالک کی عوام بھی اپنے اپنے ملکوں میں لاک ڈاؤن کے خلاف باقاعدہ مظاہرے کرنے پر مجبور ہوگئے۔

شاید یہ ہی وجہ ہے کہ کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں دنیا پلان اے یعنی لاک ڈاؤن کی ناکامی کے بعد پلان بی اور سی مثلاً اسمارٹ لاک ڈاؤن یا ہینڈسم لاک ڈاؤن سمیت کسی دوسری مؤثر حکمت عملی کی تلاش میں ہے۔ کیونکہ کورونا وائرس نے ایک بات تو اچھی طرح سے حضرت انسان کو ذہن نشین کروادی ہے کہ اگر دشمن لڑنے کے لیئے آپ کے دروازے پر دستک دینے آجائے تو اُس سے مقابلہ کرنے کے لیئے سب کام دھندہ چھوڑ کر گھروں میں دُبک کر نہیں بیٹھا جاتابلکہ حوصلہ اور ہمت کے ساتھ دشمن کا سامنا کرکے اُس کے ساتھ پنجہ آزمائی کی جاتی ہے۔میرے خیال میں یہ ہی کچھ سوئیڈن اور بیلاروس جیسے ممالک نے کرنے کی کوشش کی کہ انہوں نے اپنا کاروبارِ زندگی یکسر معطل کرنے کے بجائے صرف طبی میدان میں کورونا وائرس کو شکست دینے کی منفرد حکمت عملی اپنائی۔نتیجہ سب کے سامنے ہے کہ آج ساری دنیا کورونا وائرس سے نبرد آزما ہونے کے لیئے اُسی حکمت عملی کی پیروی کرنے کی تیاری کررہی ہے جس کی بنیاد ابتداء میں سوئیڈن اور بیلاروس نے رکھ دی تھی۔

حوالہ: یہ مضمون سب سے پہلے ہفت روزہ ندائے ملت لاہور میں 28 مئی 2020 کی اشاعت میں شائع ہوا۔

راؤ محمد شاہد اقبال
Latest posts by راؤ محمد شاہد اقبال (see all)

اپنا تبصرہ بھیجیں